Courtesy: ڈیلی پاکستان

میانمر کے بدقسمت روہنگیا مسلمانوں پر نجانے کیسی منحوس افتاد پڑی ہے کہ جو ختم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہی۔ پہلے میانمر سے جان بچا کر بنگلا دیش گئے تو وہاں دھکے پڑے، اور جو ہاتھ پاﺅں مار کر کسی اور ملک کی جانب نکلے تو وہاں کوئی انہیں قبول کرنے کو تیار نہیں۔ کچھ ایسے ہی المیے سے وہ بدقسمت روہنگیا مسلمان دوچار ہیں جو کسی طرح سعودی عرب پہنچے تھے، مگر اب ان کی مہلت بھی ختم ہو گئی، واپس وہیں بھیجا جا رہا ہے جہاں سے آئے تھے۔ نیوز ویب سائٹ ”مڈل ایسٹ آئی“ کا کہنا ہے کہ سعودی عرب نے درجنوں روہنگیا پناہ گزینوں کو بنگلہ دیش واپس بھیجنے کا فیصلہ کرلیا ہے، باوجود اس کے کہ یہ محصورین کہہ رہے ہیں کہ وہ اپنے پرانے برمی شناختی کارڈ کی مدد سے اپنی شناخت سعودی حکام کے سامنے پیش کرسکتے ہیں۔

اگر آپ سوچتے ہیں کوئی کمپنی خرد برد اور کرپشن سے پاک ہے تو یہ آپ کا وہم ہے- اگر آپ سمجھتے ہیں کہ فراڈ اور ہیرا پھیری کا کچھ نہیں کیا جا سکتا تو یہ آپ کا وسوسہ ہے" ، ڈاکٹر صداقت علی بتاتے ہیں دو سنہری روئیے جو کمپنیوں میں کرپشن، خرد برد اور ہیرا پھیری کا خاتمہ کر دیتے ہیں۔