Courtesy: اردوپوانٹ

کولون، مشی گن سے تعلق رکھنے والے ایک ایمش باشندے ٹموتھی ہوچسٹیڈلر نے ایک طرح کی ”ایمش اوبر“ سروس لانچ کی ہے۔ ایمش امریکا اور یورپ میں موجود ایک عیسائی کمیونٹی ہے۔ اس کمیونٹی کی آبادی تقریباً 80 لاکھ نفوس پر مشتمل ہے۔ ایمش لوگ ٹیکنالوجی کے استعمال کے سخت مخالف ہیں۔ یہ آج بھی انگاروں والی استری اور گدھا گاڑی استعمال کرتے ہیں۔ ان لوگوں کا ماننا ہے کہ جدید ٹیکنالوجی استعمال کرنے سے خواہشات بڑھتی ہیں اور انسان دنیا زندگی کو زیادہ وقت دینے لگتا ہے۔

نشے سے نجات کیلئےایک دُکھی دل کی پکار “یہ دھواں کھا گیا ، میری روح کو، میرے چین کو ” گلوکار سلطان بلوچ کا سلگتا ہوا نغمہ ، دلگداز آواز، دل کو چھو لینے والی دھن روح کو تڑپا دینے والے بول – ولنگ ویز پروڈکشن

ٹموتھی نے اپنی گھوڑا گاڑی سروس کا الحاق تو اوبر سے نہیں کیا لیکن علاقے میں ٹیکسی سروس کی کمی کو ضرور پورا کیا ہے۔ مسافر ٹموتھی کی گھوڑا گاڑی کو صرف پانچ ڈالر ادا کر کے بک کر سکتے ہیں۔ ٹموتھی ان پانچ ڈالروں میں مسافروں کو کولون میں کسی بھی جگہ لے جاتے ہیں ۔
ایمش لوگ چونکہ ٹیکنالوجی کا استعمال نہیں کرتے، اس لیے ٹموتھی کی اس گھوڑا گاڑی سروس کی کوئی ایپلی کیشن ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

لوگ جھنڈے کی مدد سے ٹموتھی کو اشارہ کر کے ان کی گھوڑا گاڑی روکتے اور اس میں سوار ہو جاتے ہی۔ مقامی افراد اس سروس کے آغآز سے بہت خوش ہیں اور گھوڑآ گاڑی میں بیٹھ کر صرف پانچ ڈالر میں سرسبز و شاداب علاقے کولون کی سیر کرتے ہیں۔